» » » Aoj kamal par rahay, burj zawaal main rahay....read full >>

غزل
اوجِ کمال پر رہے، برجِ زوال میں رہے
ٹھہرے نہ ایک حال پر،ہر ایک حال میں رہے


عیش میں ہم بکھر گئے ،جیش میں پاؤں اُکھڑ گئے
ہم اہلِ قیل و قال تھے، سو قیل و قال میں رہے


کوئی ہوا نہ سر نگوں،  کوئی رہا نہ سر بلند
دونوں ملول ہو رہے،دونوں ملال میں رہے


میری بھی اک ترنگ ہے،مجھ میں بھی اک ملنگ ہے
کتنے ہی رمزِ جذب و شوق میری دھمال میں رہے


میری نہ پوچھیے کہ میں اپنی مثال آپ ہوں
یعنی مری طرح کے لوگ ضرب المثال میں رہے




About Admin

Hi there! I am the admin of this page, am not the author of the post. I am pleased to share this news with you; you can express your expression as comment in below comment area….this news’ copy right is reserved by the author/publisher mentioned there. Thanks
«
Next
Newer Post
»
Previous
Older Post

No comments:

Leave a Reply


فریش فریش خبرین اور ویڈیوز


Random Posts

Loading...