» » » Woh kab ayen gay Khuda janey sitaaro tum to so jaaoo...

وہ کب آئیں خدا جانے، ستارو تم تو سو جاؤ
ہوئے ہیں ہم تو دیوانے، ستارو تم تو سو جاؤ

کہاں تک مجھ سے ہمدردی کہاں تک میری غمخواری
ہزاروں غم ہیں انجانے، ستارو تم تو سو جاؤ

گزر جائے گی غم کی رات امیدو تو جاگ اٹھو
سنبھل جائیں گے دیوانے، ستارو تم تو سو جاؤ

ہمیں رُوداد ہستی رات بھر میں ختم کرنی ہے
نہ چھیڑو اور افسانے، ستارو تم تو سو جاؤ

ہمارے دیدۂ بے خواب کو تسکین کیا دو گے
ہمیں لُوٹا ہے دنیا نے، ستارو تم تو سو جاؤ

اسے قابلؔ کی چشمِ نَم سے دیرینہ تعلق ہے
شبِ غم تم کو کیا جانے، ستارو تم تو سو جاؤ


About News Desk

Hi there! I am the admin of this page, am not the author of the post. I am pleased to share this news with you; you can express your expression as comment in below comment area….this news’ copy right is reserved by the author/publisher mentioned there. Thanks
«
Next
Newer Post
»
Previous
Older Post

No comments:

Leave a Reply


فریش فریش خبرین اور ویڈیوز


Random Posts

Loading...