» » » دور دور تک کوئی جب نظر نہیں آتا : اقبال نوید شاعری

دور دور تک کوئی جب نظر نہیں آتا : اقبال نوید


دور دور تک کوئی جب نظر نہیں آتا
آنکھ کا پرندہ بھی لوٹ کر نہیں آتا

موت بھی کنارہ ہے وقت کے سمندر کا
اور یہ کنارہ کیوں عمر بھر نہیں آتا

خواہشیں کٹہرے میں چیختی ہی رہتی ہیں
فیصلہ سنانے کو دل مگر نہیں آتا

دور بھی نہیں ہوتا میری دسترس سے وہ
بازوئوں میں بھی لیکن ٹوٹ کر نہیں آتا

اپنے آپ سے مجھ کو فاصلے پہ رہنے دے
روشنی کی شدت میں کچھ نظر نہیں آتا

میں کبھی نوید اس کو مانتا نہیں سورج
بادلوں کے زینے سے جو اتر نہیں آتا

اقبال نوید





About Admin

Hi there! I am the admin of this page, am not the author of the post. I am pleased to share this news with you; you can express your expression as comment in below comment area….this news’ copy right is reserved by the author/publisher mentioned there. Thanks
«
Next
Newer Post
»
Previous
Older Post

No comments:

Leave a Reply


فریش فریش خبرین اور ویڈیوز


Random Posts

Loading...