» » » اس کے دشمن ہیں بہت آدمی اچھا ہوگا : مکمل شاعری پڑھنے کے لئے لنک کھولیں

اس کے دشمن ہیں بہت آدمی اچھا ہوگا 
وہ بھی میری ہی طرح شہر میں تنہا ہوگا 

اتنا سچ بول کہ ہونٹوں کا تبسم نہ بجھے 
روشنی ختم نہ کر آگے اندھیرا ہوگا 

پیاس جس نہر سے ٹکرائی وہ بنجر نکلی 
جس کو پیچھے کہیں چھوڑ آئے وہ دریا ہوگا 

مرے بارے میں کوئی رائے تو ہوگی اس کی 
اس نے مجھ کو بھی کبھی توڑ کے دیکھا ہوگا 

ایک محفل میں کئی محفلیں ہوتی ہیں شریک 
جس کو بھی پاس سے دیکھو گے اکیلا ہوگا​



About News Desk

Hi there! I am the admin of this page, am not the author of the post. I am pleased to share this news with you; you can express your expression as comment in below comment area….this news’ copy right is reserved by the author/publisher mentioned there. Thanks
«
Next
Newer Post
»
Previous
Older Post

No comments:

Leave a Reply


فریش فریش خبرین اور ویڈیوز


Random Posts

Loading...