» » » » حیب جالب : اس دیس کا رنگ انوکھا تھا اس دیس کی بات نرالی تھی

حیب جالب : اس دیس کا رنگ انوکھا تھا اس  دیس کی بات نرالی تھی

اس دیس کا رنگ انوکھا تھا اس دیس کی بات نرالی تھی
نغموں سے بھرے دریا تھے رواں گیتوں سے بھری ہریالی تھی


اس شہر سے ہم آ جائیں گے، اشکوں کے دیپ جلائیں گے 
یہ دور بھی آنے والا تھا یہ بات بھی ہونے والی تھی


وہ روشن گلیاں یاد آئیں، وہ پھول وہ کلیاں یاد آئیں 
سُندر من چلیاں یاد آئیں، ہر آنکھ مدھر متوالی تھی


کس بستی میں آ پُہنچے ہم، ہر گام پر ملتے ہیں سو غم
پھر چل اس نگری میں ہمدم ہر شام جہاں اُجیالی تھی


وہ بام و در وہ راہگذر، دل خاک بسر جاں خاک بسر
جالب وہ پریشان حالی بھی کیا خوب پریشاں حالی تھی





About Admin

Hi there! I am the admin of this page, am not the author of the post. I am pleased to share this news with you; you can express your expression as comment in below comment area….this news’ copy right is reserved by the author/publisher mentioned there. Thanks
«
Next
Newer Post
»
Previous
Older Post

No comments:

Leave a Reply


فریش فریش خبرین اور ویڈیوز


Random Posts

Loading...