Express ☺ your view, expression on this post, via Facebook comment in the below box… (do not forget to tick Also post on facebook option)

Showing posts with label Islam. Show all posts
Showing posts with label Islam. Show all posts

Saturday, June 8, 2019

اردو اسلامک شاعری : علیؓ عروج ہے، جس کو کبھی زوال نہیں

اردو اسلامک شاعری : علیؓ عروج ہے، جس کو کبھی زوال نہیں

علیؓ عروج ہے، جس کو کبھی زوال نہیں
زباں پہ ذکرِ علیؓ ذات کا کمال نہیں

علیؓ ہے نجمِ درخشاں بہ آسمانِ ہُدیٰ
مریضِ بغضِ علیؓ مؤمنوں کی آل نہیں

علیؓ کے نام سے ماتھے پہ گر شکن آئے
تو جان لیجئے کہ نطفہِ حلال نہیں

علیؓ نے جن کی امامت قبول کی اُن کو
امام مانے سوا اور کوئی چال نہیں!

صدیقؓ،عمرؓ یا غنیؓ سے کریں علیؓ کو جُدا
زنادقہ کی قیامت تلک مجال نہیں!

ہوں اہلبیتِؓ نبیؐ، یا مصاحبانِ رسولﷺ 
کسی کے عشق سے محروم یہ بلالؔ نہیں

(محمد بلال خان)

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
21 رمضان، یومِ شہادت 
امیرالمؤمنین سیدنا علی المرتضیٰ کرم اللہ وجہہ الکریم





Monday, May 20, 2019

#Hadees #AchiBaat – Rozay (Fasting) ki ahmiat aur is ka ajar azeem...

#Hadees #AchiBaat – Rozay (Fasting) ki ahmiat aur is ka ajar azeem...

#Hadees #AchiBaat – Rozay (Fasting) ki ahmiat aur is ka ajar azeem... 

 #Quote #BestQuote #UrduQuote #UrduQuotes #AchiBaat #IslamicQuotes #AdabiBatain #Islam #Moral #Morality #Insaf




#Hadees #AchiBaat – Quran seekhnay wala aur Allah ki rah main mal kharch karne wala...

#Hadees #AchiBaat – Quran seekhnay wala aur Allah ki rah main mal kharch karne wala...

#Hadees #AchiBaat – Quran seekhnay wala aur Allah ki rah main mal kharch karne wala... 

 #Quote #BestQuote #UrduQuote #UrduQuotes #AchiBaat #IslamicQuotes #AdabiBatain #Islam #Moral #Morality #Insaf




Friday, May 10, 2019

Pakistan Islamic School Reforms Aim to Curb Extremism

Pakistan Islamic School Reforms Aim to Curb Extremism

Pakistan Islamic School Reforms Aim to Curb Extremism



ISLAMABAD (May 9, 2019)  Officials in Pakistan say Islamic organizations have agreed to put some 30,000 madrassas, or seminaries, under the supervision of the Ministry of Education as part of the government’s efforts to curb violent extremism in the country.

Critics blame madrassas for the rising radicalization of Pakistan’s youth and for serving as breeding grounds for transnational terrorist networks. The Pakistani military also has long been accused of covertly supporting some of these madrassas to train and send fighters to fuel conflicts in Afghanistan and a Muslim insurgency in the India-ruled portion of the disputed Kashmir region.

The agreement has outlined rules and regulations for all madrassas in Pakistan to be registered with the education ministry and those who oppose the process will not be allowed to work, Education Minister Shafqat Mehmood told the local Geo News channel. Under the deal, the government will assist madrassa operators in opening their bank accounts and processing visas for foreign students seeking admission in Pakistani seminaries, the minister explained.

Officials say the measure will enable the government to audit finances being provided to the seminaries in the name of donations and charities to deter terrorism-related transactions, and monitor activities of foreign students attending the institutions.

The rare understanding comes days after the chief military spokesman Major General Asif Ghafoor, in an unusual move, unveiled government plans to bring much-sought reforms to madrassas to put them under state control.

Analysts say the military’s lead to announce the plan was apparently aimed at deterring any possible backlash from Islamic organizations and at sending a strong message to these entities that the state is determined to press ahead with its plans.

The seminaries are largely ill-equipped. Children spend most of the time memorizing the Holy Quran, with almost no access to modern subjects. They can only get the job of a prayer leader at a mosque after finishing the madrassa education.

Supporters of the madrassa system say they are offering free education to around 2.5 million children of poverty-stricken families in Pakistan, where an estimated 25-million children are unable to receive any education.

Ghafoor says government scrutiny of all the seminaries has determined “less than 100 are suspected of involvement in promoting violent extremism and terrorism.

An Islamic education will continue to be provided, but there will be no hate speech, the army spokesman said while announcing the reform program about two weeks ago. We want to end violent extremism in Pakistan and that will only happen when our children have the same education and opportunities, he stressed.

Attempts by past Pakistani governments to mainstream the madrassa education system have faced strong resistance and threats of street agitation from religious groups for what they denounced as anti-Islam Western plot.

Mohammad Amir Rana of the Islamabad-based Pakistan Institute for Peace Studies (PIPS) explained the reason for the military to take the lead and announce the madrassa reform program.

This is quite a sensitive and critical issue and there is this thinking among the security institutions that no civilian government can handle it all alone and they need some harder perusal approach to implement the madrassa reforms, Rana said.

Prime Minister Imran Khan, who took office last August, has vowed his government would not tolerate extremist or militant outfits operating on its territory.

Rana noted that there has been no retaliation, so far, from Islamic groups to madrassa reforms because the announcement has come from the military, the institution long suspected of creating and patronizing some of the seminaries.

I think this may be one of the factors behind this new approach by the security institutions that they always have been blamed for supporting these kind of extremist elements in the country whatever the purpose was, whatever the complicated history we have. But now they have decided to deal with it by themselves, Rana noted.

A senior Pakistani official told VOA that Islamic leaders and clerics from all schools of thought will be barred from delivering sermons or speeches in their respective seminaries that fuel sectarianism among various Sunni sects and the rival minority Shi’ite Muslim community. The official requested anonymity because he was not authorized to speak to media on the subject.

He noted the government has allocated an initial amount of $3.8 million (2.7 billion rupees) for the reform program. The process of hiring 100,000 new teachers to teach contemporary subjects at madrassas has started. Regional government officials will be appointed to support and coordinate with madrassa operators in mainstreaming the schools.

If any madrassa are found involved in activities beyond their stated mandate the responsibility will rest with the religious leader running them, the official emphasized.

Pakistani authorities in recent weeks have also taken control of hundreds of hospitals, seminaries and other facilities linked to banned organizations, including those designated as global terrorists by the United Nations.

Anti-India Jaish-e-Mohammed (JeM) and Jamaatud Dawa (JuD) militant groups were also among them. Indian officials blamed JeM for orchestrating a deadly suicide car bombing in February that killed 40 paramilitary forces in India-ruled portion of the disputed Kashmir region.

The move comes at a time of increased pressure on the country to act against Islamist groups that continue to operate religious seminaries and other facilities despite being designated as global terrorists by the United Nations.

It is widely believed that Pakistan’s steps against Islamist groups and entities stem from pressure the Paris-based Financial Action Task Force (FATF) is putting on Islamabad to take effective steps against money laundering and terrorism financing.

The FATF identifies jurisdictions with weak measure to combat money laundering and terrorist financing. Countries with inadequate controls for curbing money laundering and terrorism financing appear on the watchdog’s “grey list.” The group’s “blacklist” is reserved for countries that fail to meet international standards in stopping financial crimes.

The watchdog is due to meet next month to review Pakistani measures before a critical meeting in September where a final decision will be taken to either remove the country from FATF’s grey list or to place it in its blacklist. In the event of being blacklisted, analysts say, Pakistan’s economic woes will worsen because international financial dealings and trade will face restrictions.

Source: Voice of America



Thursday, March 7, 2019

حضرت ابراھیم علیہ السلام کا ایک قصہ جو آج کے مسلمانوں کے لئے بہترین سبق ہے: ضرور پڑھیں اور شیئر کریں

حضرت ابراھیم علیہ السلام کا ایک قصہ جو آج کے مسلمانوں کے لئے بہترین سبق ہے: ضرور پڑھیں اور شیئر کریں

حضرت ابراھیم علیہ السلام کا ایک قصہ جو آج کے مسلمانوں کے لئے بہترین سبق ہے: ضرور پڑھیں اور شیئر کریں 

حضرت ابراھیم (ع) کی عادت تھی کہ جب تک کوئی مہمان ان کے دسترخوان پر نہ بیٹھتا تو وہ کھانا نہیں کھاتے تھے۔ایک دن ایک بوڑھے آدمی کو دیکھا اور کہا کہ 





Thursday, January 31, 2019

سخاوت : حضرت عمر فاروق رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے دور ایک سچا واقعہ: ضرور پڑھیں

سخاوت : حضرت عمر فاروق رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے دور ایک سچا واقعہ: ضرور پڑھیں

سخاوت : حضرت عمر فاروق رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے دور ایک سچا واقعہ: ضرور پڑھیں

یہ حضرت عمر فاروق رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے دور خلافت کا واقعہ ہے کہ سارے شہر میں آگ لگ گئی۔ آگ کے بلند بالا شعلے گھروں، باغوں اور دکانوں کو سوکھی لکڑیوں کی طرح جلانے لگے۔ آگ اس قدر تیزی سے بھڑک رہی تھی کہ اس کے شعلے اونچے اونچے درختوں پر بنے ہوئے پرندوں کے گھونسلوں کو بھی جلا رہے تھے۔ آدھے شہر کو آگ کے شعلوں نے اپنی گرفت میں لے رکھا تھا اور آگ برابر بڑھتی جا رہی تھی، آگ بجھانے کی کوئی بھی تدبیر کارگر ثابت نہیں ہو رہی تھی۔ پانی کی مشکیں ڈالنے سے آگ مزید بھڑک اٹھتی۔ یوں معلوم ہوتا تھا کہ پانی آگ بجھا نہیں رہا بلکہ آگ کو تیز کر رہا ہے۔ ایسے لگ رہا تھا جیسے آگ کو اللہ تعالیٰ سے مدد پہنچ رہی ہو۔ اس کی لپٹیں بڑھتی جا رہی تھیں۔

جب لوگ آگ پر قابو پانے میں ناکام ہو گئے تو گھبرائے ہوئے حضرت عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے پاس آئے اور کہا، اے امیر المومنین! ہمارے گھروں، باغوں اور دکانوں کو لگی ہوئی آگ پانی سے نہیں بجھ رہی۔ حضرت عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے فرمایا، یہ آگ اللہ تعالیٰ کے قہر کی نشانیوں میں سے ہے یہ آگ تمہارے بخل کی آگ کا شعلہ ہے اور تمہارے بخل کے گناہ کی سزا ہے۔ تم آگ پر پانی ڈالنا چھوڑو اور غریبوں اور حاجت مندوں میں روٹیاں تقسیم کرو۔ آئندہ کے لیے بخل سے توبہ کرو۔

لوگوں نے یہ سنا تو کہنے لگے، اے امیر المومنین! غریبوں اور مسافروں کے لیے ہم نے اپنے دروازے کھول رکھے ہیں۔ حضرت عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے فرمایا، تمہاری مہمان نوازی بطور عادت ہے بطور عبادت نہیں ہے۔ تم اپنی شان و شوکت اور خود نمائی کے لیے یہ کام کرتے ہو، خوف خدا اور نیاز مندی کی نیت سے نہیں کرتے۔ حضرت عمر فاروق رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی بات سن کر ان لوگوں نے دل کھول کر سخاوت کی اور اپنی نیتوں کو درست کر لیا۔ آئندہ کے لیے بخل اور ریاکاری سے توبہ کی۔ چناچہ شہر والے سخاوت کرنے میں مصروف تھے اور اسی وقت آگ کے شعلے آہستہ آہستہ سرد ہوتے جا رہے تھے۔ تھوڑی دیر میں شہر میں لگی ہوئی آگ سرد ہو گئی۔

اس واقعہ سے یہ نتیجہ اخذ ہوتا ہے کہ جب کوئی برائی اجتماعی طور پر بہت زیادہ بڑھ جائے تو اللہ تعالیٰ کی طرف سے تنبیہہ کے طور پر کوئی نہ کوئی آفت نازل ہو جاتی ہے۔ جو صرف اور صرف آللہ تعالیٰ کی طرف رجوع کرنے سے ہی ٹلتی ہے۔ اس سے یہ نتیجہ بھی نکلتا ہے کہ سخاوت کا درجہ اللہ تعالیٰ کی بارگاہ میں بہت بلند ہے۔ صدقہ و خیرات دیتے رہنے سے انسان بے شمار آفات و مصائب سے بچا رہتا ہے۔

(حکایاتِ رومی سے ماخذ)





Friday, November 2, 2018

یہ زمین پر فساد پھیلانے والے کون ہیں؟ قرآن شریف کی روشنی میں

یہ زمین پر فساد پھیلانے والے کون ہیں؟ قرآن شریف کی روشنی میں

فساد اور فسادی آدمی

قال اللّٰہ تعالی {وَاللّٰہُ لَا یُحِبُّ الْفَسَادَ o} [البقرہ:۲۰۵]
اللہ عزوجل نے فرمایا: '' اور اللہ تعالیٰ فساد کو پسند نہیں فرماتا۔ ''
{وَاللّٰہُ لَا یُحِبُّ الْمُفْسِدِیْنَ o} [المائدہ:۶۴]
مزید فرمایا: '' اور اللہ تعالیٰ فسادیوں کو پسند نہیں فرماتا۔ ''

فساد: سیدھی چیز سے ٹیڑھی کی طرف چلے جانے کو فساد کہتے ہیں اور یہ درستی کی ضد ہے۔

(فسادی) : وہ لوگ ہیں جو حق سے پھر جاتے ہیں یعنی لا الٰہ الا اللّٰہ سے اعراض کرکے باطل کی طرف چلے جاتے ہیں ۔اللہ کے علاوہ کسی اور کو معبود سمجھنے لگ جاتے اور کفر کرتے ہیں۔ اللہ کے راستے سے روکتے ہیں، لوگوں کو محمد صلی اللہ علیہ وسلم اور قرآن پر ایمان لانے سے منتشر کردیتے ہیں۔ مسلمانوں کے متعلق خفیہ تدابیر کرتے ہیں۔ جب کسی بستی میں جاتے ہیں تو قتل و غارت ،گھروں کو جلانا اور گرانا شروع کردیتے ہیں، نیز عزت والوں کو ذلیل و رسوا کرنے ایسے فسادات برپا کرتے چلے جاتے ہیں۔

یہ وہ لوگ ہیں جن کے متعلق قرآن فرماتا ہے:
{الَّذِیْنَ یُفْسِدُوْنَ فِی الْاَرْضِ وَلَا یُصْلِحُوْنَ o} [الشعراء:۱۵۲]
'' وہ لوگ کہ جو زمین میں فساد برپا کرتے ہیں اور درستی نہیں کرتے۔ ''

اللہ کے اوامر سے سرتابی کرتے اور منہیات کا ارتکاب کرتے ہیں۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی سنن کو خراب کرتے اور دین میں خرافات ایجاد کرتے ہیں۔
وعدے اور میثاق کا پاس نہیں رکھتے، دوستوں اور پیاروں کے درمیان تفرقہ اور پھوٹ ڈالتے اور چغلی کرتے ہیں۔ ان کی بات ٹیڑھی، افعال قبیح اور اعتقاد فاسد ہوتے ہیں۔ بات بات پر جھوٹ، وعدوں کی خلاف ورزی، امانت میں خیانت اور دھوکہ ان کا شعار ہے۔ رشتہ دار یوں کو اللہ تعالیٰ نے جوڑنے کا حکم دیا مگر یہ لوگ اسے کاٹتے ہیں۔ جھگڑے کے وقت بکواس اور فحش گوئی سے کام لیتے ہیں۔ کھیتی اور باغات اجاڑتے ہیں اور جانوروں کی نسل کشی کرتے ہیں۔ زناکاری کا ارتکاب، شراب کا استعمال، سود اور رشوت عام، تجارت میں ذخیرہ اندوزی، یتیموں اور لوگوں کا مال ناحق ہڑپ کرنا، ناپ تول میں کمی ان کا وطیرہ ہے۔ لوگوں کو دھوکہ دیتے ہیں اور ان کے خلاف چالیں چلتے ہیں، کافروں سے یاری لگاتے ہیں اور ان سے مل کر مسلمانوں کے خلاف سازشوں کا جال بنتے ہیں۔ جادو ٹونے سے کام لیتے ہوئے میاں بیوی کے درمیان جدائی ڈال دیتے ہیں اور زمین پر فساد برپا کرتے ہیں۔






Thursday, September 27, 2018

#BestQuotes – Saying of Hazrat Ali AS – Please share after reading ≥

#BestQuotes – Saying of Hazrat Ali AS – Please share after reading ≥

#BestQuotes – Saying of Hazrat Ali AS – Please share after reading ≥ 

#Quotes , #quotes_on_life , #quotes_on_love , #quotes_on_smile , #quotes_on_friendship , #quotes_on_friends , #quotes_in_hindi , #quotes_on_attitude , #quotes_for_girls , #quotes_by_rumi , #quotes_by_gandhi , #quotes_by_buddha , #quotes_by_abdul_kalam , #quotes_by_famous_people , #Islamic_Quotes , #Quranic_Quotes  #Best_Quotes ,




Wednesday, September 26, 2018

عشق حسین ؓ |  یہ مضمون پڑھنے کے لئے لنک پر کلک کریں

عشق حسین ؓ | یہ مضمون پڑھنے کے لئے لنک پر کلک کریں



میں نے تو اپنی زندگی میں نہیں دیکھا کہ کوئی بھی بزرگ خواہ اُس کا مسلک تو دور کی بات ہے، غیر مذہب بدھ ، ہندو، سکھ بھی یوم عاشورہ پر آبدیدہ ہو جاتے ہیں اور عیسائیت تو ایسا مذہب ہے جس کی اپنی کتاب میں حضور صلی اللہ علیہ وسلم کے بارے میں اور اُن کی آمد کے بارے میں واضح اشارات اور نشانیاں ملتی ہیں۔ حضور صلی اللہ علیہ وسلم کے سفرِ شام کے بارے میں جب وہ چھوٹے تھے تو راہب نے وہ تمام نشانیاں دیکھ کر آپ کو پہچان لیا، اور حضرت حسین ؓ کے سر مبارک کو جب ظالم یزید کے پاس لے کر جا رہے تھے، تو عیسائی پادری کا عقیدت و احترام کے ساتھ سر مبارک کا دھونا، خوشبو لگانا، اور زیر خطیر خرچ کر کے ایک رات کے لئے اپنے پاس رکھنا، اس بات کی دلیل ہے کہ عیسائیوں کو ہمارے نبی محترم کے بارے میں اگر مکمل نہ مُسمی کسی حد تک علم و آگہی ضرور حاصل تھی۔

جیسا کہ میں نے اپنے ابتدائیہ میں عرض کیا ہے کہ ہر مسلمان مسلک سے ماورا ہو کر احترام حسین ؓ ابن علی ؓ، اور یاد نواسہِ رسول کی وجہ سے محرم کا چاند نظر آتے ہی بے کل بے ہمہ و با ہمہ و بے نظیر بن کر بے ہمتا اور بیابان گرو بلکہ خود کو بیامان مرگ کا باسی بنا لیا ہے، کیونکہ نبی آخر زماں محمد رسول اللہ علیہ وسلم کے فرمان کے باوجود کہ میرے اہلِ بیت ، یعنی خاندان رسول صلی اللہ علیہ وسلم کی عزت کریں۔ حتیٰ کہ حضرت امام حسین ؓ کے بارے میں فرمایا کہ میں حسین ؓ سے ہوں اور حسین ؓ مجھ سے ہیں۔ جن کو ہم اہل بیت اور پنجتن پاک کہتے ہیں، حضرت محمد رسول اللہ صلی علیہ وسلم ، حضرت علی ، بی بی فاطمہ الزہرا، حضرت امام حسن ؓاور حضرت حسین ؓ ۔

حضرت عثمان علی ہجویری ؒ سے لے کر صوفی برکت علی ؒ تک سبھی بزرگان دین نے سانحہ کربلا پر اپنے خون جگر سے دِل نگار کی بے اختیار ہُو کر جو عکاسی کی ہے، وہ الفاظ قابل کشید ہیں۔ عشق جب اپنے امام کے حضور میں نیاز مندانہ خراج عقیدت پیش کرنے کے بے مثل منظر پہ حاضر ہوا، کہرام مچ گیا، زمین و آسمان کی طابیں ٹوٹنے لگیں، ہوش و حواس کھو بیٹھا تھر تھرا کر پوچھا یہ کیا؟

ندا آئی کائنات کے پروردگار کے حبیبِ اقدس و اکمل ، اکرم و اجمل ، طیب و اطہر روحی فدا صلی اللہ علیہ وسلم کی بیٹی کے لخت جگر شہزادہ کونین ؓ کے جسدِ اطہر کا لاشہ ہے۔ جسے شہادت کے بعد گھوڑوں کی ٹاپوں سے رُوندا گیا

ایک عرض پھر کی یہ کِس نے کیا؟

پھر ندا آئی یہ قصہ ِ کفار کا نہیں ، حضور اقدس کے اُمتیوں کا ہے۔

اُن کی اِس تکرار نے کہ شہزادہ کونین کے قتل میں جلدی کرو، جمعے کی نماز قضا نہ ہو، عشق کو ورطہ حیرت میں ڈال دیا، قبا نوچ کر تار تار کر ڈالی پامالِ ناز نے مُنہ پر راکھ ملی، سر پر خاک ڈالی ایک دِلزور مرثیہ پڑھا، اور ہمیشہ ہمیشہ کیلئے اِس منظر کو نظروں میں یُوں سمیٹ لیا، کہ پھر کبھی اِس کو نظروں سے اُوجھل نہیں ہونے دیا۔

جب شامِ غریباں کے حضور غلامانہ خراج تحسین پیش کرنے کے لئے حاضر ہوا آپے سے باہر ہوگیا، حیرت سے اِدھر اُدھر دیکھنے لگا، آنکھیں پھٹی کی پھٹی رہ گئیں، اُس نے ایسا منظر کبھی نہیں دیکھا تھا، اُس کے سامنے ریت کے ذروں پر حُسن و عشق اور وفا و جفا کی داستان کا انوکھا باب خون سے لکھا ہوا تھا، سہمی ہوئی مقدس جانیں بوستانِ رسول کے کملائے ہوئے پھول ، گنج شہیداں کے کٹے ہوئے اعضاء، جلے ہوئے خیمے دُھواں چھوڑتی طنابیں ، لُٹا ہوا خانوادہِ رسول، بے بسی و بے کسی کے عالم میں جگر بند بتول ؓ حسین ؓ کا سر قلم ، جسم برہنہ ، لاشہ روندا ہوا، اہل بیت رسیوں میں جکڑے ہوئے، خاک و خون میں نہایا ہوا عشق ، دہشتِ غربت میں سربُریدہ، پیشوائےِ دین، ساقی کوثر کا تشنہ لب نواسہ ، سبط پیغمبر کا گھوڑوں سے رُوندا ہوا وجود اطہر ہر طرف گھمبیر اُداسی ، ایک وحشت خیز خاموشی، ایک الم ناک کرب، یہ درد ناک منظر اُس سے دیکھا نہ گیا، ہوش و حواس کھو بیٹھا، خوں کے آنسو رو دیا، بسمل کی طرح تڑپا، مذبوح کیطرح لوٹا، پھر یکایک اُس نے اَمارت کی عِمارت کی انیٹ انیٹ کر دی، لذت کا جام توڑ دیا، زینت کا عمامہ زمین پر دے مارا، راحت کا ترانہ بند کر دیا، عشرت کا رباب توڑ دیا، شہرت کی قبا تار تار کر دی۔

شامِ غریباں کے محبوبوں کی خاک پاسر میں ڈالی، ندامت کی قبا اُوڑھی، ملامت کی گڈری پہنی، صبر کا کاسہ تھاما، اور ایسا روپوش ہوا کہ پھر کبھی ، کسی روپ میں پرگھٹ نہ ہوا۔ اِس منظر کو کبھی نظروں سے اُوجھل نہ ہونے دیا اور حیات اُلدنیا کی منزل اِسی منظر کی پیشوائی میں طے کی۔

قارئین.... آج پھر جمعہ ہے ، یا الٰہی میرے وطن کی خیر ہو، اُمت مسلمہ کے مقدر ، کو مَکدر دینے والی یہود وہنود ، موجودہ دور کی طاقتیں قیصر و کسریٰ ، گنبد خضریٰ پہ نقب لگانے کی منصوبہ بندی کرنیوالوں کی سر کوبی کیلئے کسی سلطان کی نہیں.... صلاح الدین کے ظہور کی منتظر ہیں کیونکہ ایام آلام کی تاریخ تیرے کلمہ گو مُسلمانوں پہ بار بار آتی ہے مگر ذوالجلال ولاکرام، تو تو گواہ ہے، کہ تو واحد بتول ؓ جیسی ہستی بھی ایک ہے، اور حسین ؓ ابنِ علیؓ بھی ایک ہے، جن کی وجہ سے تیرا نام زندہ ہے، اور ہم زندہ ہیں شیرِ خدا، کا شیر حسین ؓ

بشر تو کیا فرشتوں سے نہ ایسی بندگی ہوگی

حُسین ؓ ابن علی ؓ آئینگے دُنیا دیکھتی ہو گی

ہمارے خون کے بدلے میں اُمت بخش دے یا رب

خدا سے حشر میں یہ التجا شبیر ؓ کی ہوگی

آخر میں مولانا طارق جمیل صاحب سے سُنا ہوا ایک واقعہ ایمان تازہ کرنے کیلئے قارئین سُن لیں واقعہ کربلا کے تین سو سال بعد اہل بیت کی عزت و عفت مآب بی بی اپنے بچوں سمیت ہجرت پر مجبور ہوئیں، کیونکہ تنگ دستی کے باوجود سید ہونے کی وجہ سے وہ کسی سے صدقہ خیرات لینے پر تیار نہیں تھیں، ہمارے نبی محترم توکل کی انتہا دیکھیں کہ انہوں نے اپنی اہل بیت اور قیامت تک کیلئے اُن کی اُولاد پر پابندی لگا دی کہ وہ ذکوة ، صدقہ خیرات نہیں لے سکتی وہ بی بی ہجرت کر کے دوسرے ملک چلی گئیں، معلوم کرنے پہ پتہ چلا کہ شہر میں ایک عیسائی اور ایک مسلمان خاصے صاحب حیثیت ہیں، وہ یہ سوچ کر کہ پہلے مسلمان سے مِلنا چاہئے، وہ جب اُس کے پاس پہنچیں تو مسلمان نے اُن سے اہل بیت ہونیکا ثبوت مانگا، جو اُن کے پاس نہیں تھا، مجبور ہو کر پھر وہ عیسائی سے ملیں اور اپنا تعارف کرایا کہ میں اہل بیت میں سے یعنی اُولادِ رسول ہوں، تو اُنہوں نے نہایت گرمجوشی سے استبقال کیا، اپنی بیوی کو بلایا، اور بچوں کو نہایت پیارو احترام سے گھر لے گئے، رات کو حضور صلی اللہ علیہ وسلم مسلمان اور عیسائی کو خواب میں ملے، اور مسلمان پر سخت غصے کا اظہار فرمایا کہ جب میری بیٹی تمہارے پاس آئی، تو تم نے ثبوت مانگنے شروع کر دیئے، اور عیسائی کو نہایت تپاک سے ملے اس پر بہت خوش ہوئے، حضور جنت کے محل میں کھڑے تھے، جو نہایت خوبصورت اور قابل دید تھا۔ عیسائی سے فرمایا کہ یہ اب تمہارا ہے، عیسائی نے کلمہ پڑھا اور اہل بیت کی قدر افزائی کے صلے میں وہ مُسلمان ہوگیا۔

قائین ، اب اِس بحث میں پڑنے کی کیا ضرورت ہے کہ شہادت حسین ؓ کے ذمہ دار کِس مسلک سے تعلق رکھتے تھے؟ میرے خیال میں حضرت علی کرم اللہ وجہہ اور حضرت بی بی عائشہ ؓ کے درمیان جنگ جمل کرانے والے منافقین ہی اس کے ذمہ دار تھے۔ جن کا نہ کوئی دین ہوتا ہے اور نہ ایمان .... جب یزید ثانی مرزا غلام احمد قادیانی حُرمتِ رسول پر نعوذ بااللہ زبان درازی کر رہا تھا۔ اُس وقت کروڑوں مسلمانوں کا ایمان کہاں تھا؟ کیا نواسہِ رسول کو شہید کرنیوالے مسلمانوں کا ایمان ، اور آج کے مسلمانوں کے ایقان میں کچھ فرق ہے؟ شام ، فلسطین ، عراق ، افغانستان، ایران، سعودیہ کی جنگ کس سے ہے؟ بقول مظفر علی شاہ

ہر جہت سے شاہ کو پرکھا گیا

کربلا تھا امتحان ایمان کا

جان مال و نسل در راہ خدا

مرحبا اے پیکر صبر و وفا

با عمل نفسیر تھی معراج کی

کربلا سے قافلہ چلتا ہوا

نواسہِ رسول سر اقدس اور اسیرانِ اہل بیت کو دربار یزیدی میں پیش کرنیکا سیاہ داغ نہ تو قیامت تک دُھویا جاسکتا ہے نہ بھلایا جاسکتا ہے.... روزِ محشر مسلمان اپنے دین اور ایمان کی پہچان کیسے کرائیں گے؟

اصل سورس پر پڑھیں : نئی بات

Monday, September 24, 2018

Muslims care more about halal food than halal income: Malaysian minister Dr Asyraf Waidi

Muslims care more about halal food than halal income: Malaysian minister Dr Asyraf Waidi

Muslims care more about halal food than halal income: Malaysian minister Dr Asyraf Waidi


(Web Desk) Malaysia’s deputy minister of Islamic affairs said on Wednesday that people cared more about their food being halal than caring whether the source of their income was halal or not, The Malay Mail Online reported.

Addressing a seminar on Islamic financial institutes and charity in Kuala Lumpur, Dr Asyraf Waidi Dusuki said: “Concerns over halal food and halal labels is paramount. But similar concerns may not be true when it comes to where the money comes from to buy that halal food.”

Dusuki regretted that the issue of halal and haram was restricted to the consumption of food and people associated practicing Islam with worship only. “The money they receive to buy that food, even if coming from usury, interest or corruption, they don’t care,” he remarked

“This is something very much the reality in our society today.”

Earlier this week, minister Datuk Seri Jamil Khir Baharoom said the authorities would not issue certification for non-alcoholic beer or any product that has a ‘haram’ ingredient, Bernama reported.

The debate on halal certification emerged after a US pretzel chain, Auntie Anne said its request for the certificate was denied as the authorities expressed reservations over “pretzel dog” on the menu.

In the Muslim-majority country, restaurants use halal alternates including turkey ham, beef bacon for items that generally include pork.




Wednesday, September 12, 2018

Serena Hotels wins at World Travel Awards 2018

Serena Hotels wins at World Travel Awards 2018

Serena Hotels has won the ‘Leading Hotel in Pakistan Award’ at the World Travel Awards 2018 gala ceremony in Hong Kong.

The results of the World Travel Awards, Asia and Australia were announced in a Gala Awards ceremony on 3rd September 2018 in Hong Kong.

Serena Hotels shined this year again with the Islamabad, Dushanbe and Kabul Serena Hotels winning the Leading Hotel in Pakistan, Tajikistan and Afghanistan respectively. Serena Hotels has been the recipient of awards at the WTA for a number of years, as Serena Hotels are globally recognised for their quality and service.

Serena Hotels CEO, Aziz Boolani received the awards, and said, “Excellence is never an accident; It is the result of intention, sincere effort, intelligent direction, skilful execution and the vision to see obstacles as opportunities. At Serena, we strive to provide the best possible experience to our guests while reflecting the culture of the locality. These awards validate our efforts and we are delighted to receive this recognition of our hospitality”.



The World Travel Awards™ is recognizsed globally as the ultimate hallmark of quality, with winners setting the benchmark to which all others aspire. The selection of the winners is done through votes by travel and tourism professionals worldwide. Thus, the awards recognise industry leaders selected by their peers.

Tourism Promotion Services Pakistan, the parent company of Islamabad Serena Hotels, is certified for ISO 9001:2008 Quality Management System and Islamabad Serena Hotel, the flagship property, has successfully implemented Food Safety Management System ISO 22000. It is the only Hotel in Pakistan that has been awarded the certificate for OHSAS 18001, the International Occupational Health and Safety Standard and ISO 14001 Environmental Management Standard. (News Desk)





Friday, May 25, 2018

حضور ﷺ کا نور مبارک : حضور ﷺ کے کمرے میں روشنی ہی روشنی تھی، حضرت بی بی حلیمہ سعدیہ رضی اللہ عنہا نے کیا فرماتی ہیں: ضرور پڑھیں

حضور ﷺ کا نور مبارک : حضور ﷺ کے کمرے میں روشنی ہی روشنی تھی، حضرت بی بی حلیمہ سعدیہ رضی اللہ عنہا نے کیا فرماتی ہیں: ضرور پڑھیں

حضرت حلیمہ سعدیہ رضی اللہ عنہا فرماتی ہیں کہ میں جب مکہ معظمہ میں پہنچی اور حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے گھر آئی تو میں نے دیکھا کہ جس کمرہ میں حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم تشریف فرما تھے وہ کمرہ سارا چمک رہا تھا میں نے حضرت آمنہ رضی عنہا سے پوچھا کیا آپؓ نے اس کمرہ میں بہت سے چراغ جلا رکھے ہیں تو حضرت آمنہ رضی اللہ عنہا نے جواب دیا نہیں بلکہ یہ ساری روشنی میرے لخت جگر پیارے بچہ کے چہرے کی ہے حلیمہ رضی اللہ عنہا فرماتی ہیں میں اندر گئی تو حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو دیکھا کہ آپؐ سیدھے لیٹے ہوۓ سو رہے ہیں اور اپنی مبارک ننھی انگلیاں چوس رہے ہیں 

میں نے آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا حسن جمال دیکھا تو فریفتہ ہو گئیں اور حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی محبت میرے بال بال میں رچ گئی پھر میں حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے سرانور مبارک کے پاس بیٹھ گئی اور حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو اٹھا کر اپنے سینے سے لگانے کے لیے ہاتھ بڑھایا تو حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے اپنی چشمان مبارک کھول دیں اور مجھے دیکھ کر مسکرانے لگے اللہ اکبر میں نے دیکھا کہ اس نور بھرے منہ سے ایک ایسا نور نکلا جو آسمان تک پہنچ گیا پھر میں نے حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو اٹھا کر بہت پیار کیا پھر حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو لے کر واپس چلنے لگی تو حضرت عبدالمطلب رضی اللہ عنہ نے زاد راہ کے لیے کچھ دینا چاہا تو میں نے کہا حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو پا لینے کے بعد اب مجھے کسی چیز کی ضرورت نہیں

 حضرت حلیمہ رضی اللہ عنہا فرماتی ہیں جب میں اس نعمت عظمی کو گود میں لے کر باہر نکلی تو مجھے ہر چیز سے مبارک باد کی آوازیں آنے لگیں کہ اے حلیمہ رضی للہ عنہا رضاعت محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی تجھے مبارک ہو پھر جب میں اپنی سواری پر بیٹھی تو میری کمزور سواری میں بجلی جیسی طاقت پیدا ہو گئی کہ وہ بڑی بڑی توانا اونٹنیوں کو پیچھے چھوڑنے لگی سب حیران رہ گۓ کہ حلیمہ رضی اللہ عنہا کی سواری میں یک دم یہ طاقت کیسے آ گئی؟ تو سواری خود بولی میری پشت پر اولین و آخرین کے سردار محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سوار ہیں انہیؐ کی برکت سے میری کمزوری جاتی رہی اور میرا حال اچھا ہو گیا۔

جامع المعجزات ص 86




Wednesday, April 18, 2018

جانوروں کے ساتھ احسان وسلوک اجر وثواب کاباعث، اور اس عمل سے اُس بدکار عوت کی بخشش ہوگئی

جانوروں کے ساتھ احسان وسلوک اجر وثواب کاباعث، اور اس عمل سے اُس بدکار عوت کی بخشش ہوگئی

جانوروں کے ساتھ احسان وسلوک اجر وثواب کاباعث، اور اس عمل سے اُس بدکار عوت کی بخشش ہوگئی

حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضور اکرم  صلی اللہ علیہ وسلمنے فرمایا کہ بدکار عورت کی بخشش صرف اس وجہ سے کی گئی کہ ایک مرتبہ اس کا گذر ایک ایسے کنویں پر ہوا جس کے قریب ایک کتا کھڑا پیاس کی شدت سے ہانپ رہا تھا، اور قریب تھاکہ وہ پیاس کی شدت سے ہلاک ہوجائے ، کنویں سے پانی نکالنے کو کچھ تھا نہیں، اس عورت نے اپنا چرمی موزہ نکال کر اپنی اوڑھنی سے باندھا اور پانی نکال کر اس کتے کو پلایا، اس عورت کا یہ فعل بارگاہ الٰہی میں مقبول ہوا،اور اس کی بخشش کر دی گئی۔(مسلم: باب فضل ساقی البہائم، حدیث:۵۹۹۷(





Friday, March 16, 2018

قرآن شریف کی اس سورۃ کو اگر انسان بغور پڑھے ، تو وہ کبھی بھی گناہ کرنے کا نہیں سوچے گا……

قرآن شریف کی اس سورۃ کو اگر انسان بغور پڑھے ، تو وہ کبھی بھی گناہ کرنے کا نہیں سوچے گا……

سورة القَارعَة
شروع الله کے نام سے جو بڑا مہربان نہایت رحم والا ہے

ترجمہ
کھڑ کھڑانے والی (۱) کھڑ کھڑانے والی کیا ہے؟ (۲) اور تم کیا جانوں کھڑ کھڑانے والی کیا ہے؟ (۳) (وہ قیامت ہے) جس دن لوگ ایسے ہوں گے جیسے بکھرے ہوئے پتنگے (۴) اور پہاڑ ایسے ہو جائیں گے جیسے دھنکی ہوئی رنگ برنگ کی اون (۵) تو جس کے (اعمال کے) وزن بھاری نکلیں گے (۶) وہ دل پسند عیش میں ہو گا (۷) اور جس کے وزن ہلکے نکلیں گے (۸) اس کا مرجع ہاویہ ہے (۹) اور تم کیا سمجھے کہ ہاویہ کیا چیز ہے؟ (۱۰) (وہ) دہکتی ہوئی آگ ہے (۱۱)


اللہ ہمیں نیک عمل کی توفیق عطا فرمائے: امین



Wednesday, December 20, 2017

Hazrat Umar Razi Allah Anhoo ke aqwaal

Hazrat Umar Razi Allah Anhoo ke aqwaal

تین چیزیں محبت بڑھانے کا ذریعہ ھیں
· سلام کرنا
· دوسروں کے لئے مجلس میں جگہ خالی کرنا
· مخاطب کو بہترین نام سے پکارنا

_____

کم کھانا صحت کم بولنا حکمت اور کم سونا عبادت میں داخل ہے۔




Tuesday, December 12, 2017

 قیامت کب ہوگی؟  قیامت اس وقت تک قائم نہ ہو گی جب تک دو عظیم جماعتیں جنگ : تفصیل پڑھیں

قیامت کب ہوگی؟ قیامت اس وقت تک قائم نہ ہو گی جب تک دو عظیم جماعتیں جنگ : تفصیل پڑھیں

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:

قیامت اس وقت تک قائم نہ ہو گی جب تک دو عظیم جماعتیں جنگ نہ کریں گی۔ ان دونوں جماعتوں کے درمیان بڑی خونریزی ہو گی۔ حالانکہ دونوں کا دعویٰ ایک ہی ہو گا اور یہاں تک کہ بہت سے جھوٹے دجال بھیجے جائیں گے۔ تقریبا تیس دجال۔ ان میں سے ہر ایک دعویٰ کرے گا کہ وہ اللہ کا رسول ہے اور یہاں تک کہ علم اٹھا لیا جائے گا اور زلزلوں کی کثرت ہو گی اور زمانہ قریب ہو جائے گا اور فتنے ظاہر ہو جائیں گے اور ہرج بڑھ جائے گا اور ہرج سے مراد قتل ہے اور یہاں تک کہ تمہارے پاس مال کی کثرت ہو جائے گی بلکہ بہہ پڑے گا اور یہاں تک کہ صاحب مال کو اس کا فکر دامن گیر ہو گا کہ اس کا صدقہ قبول کون کرے اور یہاں تک کہ وہ پیش کرے گا لیکن جس کے سامنے پیش کرے گا وہ کہے گا کہ مجھے اس کی ضرورت نہیں ہے اور یہاں تک کہ لوگ بڑی بڑی عمارتوں پر آپس میں فخر کریں گے۔ ایک سے ایک بڑھ چڑھ کر عمارات بنائیں گے اور یہاں تک کہ ایک شخص دوسرے کی قبر سے گزرے گا اور کہے گا کہ کاش میں بھی اسی جگہ ہوتا اور یہاں تک کہ سورج مغرب سے نکلے گا۔ پس جب وہ اس طرح طلوع ہو گا اور لوگ دیکھ لیں گے تو سب ایمان لے آئیں گے لیکن یہ وہ وقت ہو گا جب کسی ایسے شخص کو اس کا ایمان لانا فائدہ نہ پہنچائے گا جو پہلے سے ایمان نہ لایا ہو یا اس نے اپنے ایمان کے ساتھ اچھے کام نہ کئے ہوں اور قیامت اچانک اس طرح قائم ہو جائے گی کہ دو آدمیوں نے اپنے درمیان کپڑا پھیلا رکھا ہو گا اور اسے ابھی بیچ نہ پائے ہوں گے نہ لپیٹ پائے ہوں گے اور قیامت اس طرح برپا ہو جائے گی کہ ایک شخص اپنی اونٹنی کا دودھ نکال کر واپس ہوا ہو گا کہ اسے کھا بھی نہ پایا ہو گا اور قیامت اس طرح قائم ہو جائے گی کہ وہ اپنے حوض کو درست کر رہا ہو گا اور اس میں سے پانی بھی نہ پیا ہو گا اور قیامت اس طرح قائم ہو جائے گی کہ اس نے اپنا لقمہ منہ کی طرف اٹھایا ہو گا اور ابھی اسے کھایا بھی نہ ہو گا..!!

صحیح بخاری 7121


Thursday, October 12, 2017

’’اگر علیؓ یہاں موجود نہ ہوتے تو عمر ہلاک ہوچکا تھا‘‘ حضرت عمر فاروق رضی اللہ عنہ یہ کب اور کیونکر کہا تھا

’’اگر علیؓ یہاں موجود نہ ہوتے تو عمر ہلاک ہوچکا تھا‘‘ حضرت عمر فاروق رضی اللہ عنہ یہ کب اور کیونکر کہا تھا



حضرت عمر فاروق رضی اللہ عنہ کے دو اثر انگیز واقعات

حضرت عمرؓ کی خدمت میں ایک شخص نے عرض کیا میری شادی کو آج چھٹا مہینہ ہے، لیکن اسی مہینے میری عورت کے ہاں بچہ پیدا ہوگیا ہے۔ اس بارے میں کیا حکم ہے؟ فرمایا عورت کو سنگسار کردو۔

حضرت علی کرم اللہ وجہہ بھی اس مجلس میں موجود تھے۔ کہا یہ فیصلہ ٹھیک نہیں ہے۔

اللہ تعالیٰ فرماتا ہے: حملہ و فصالہ ثلثون شہرا: بچے کا حمل اور اس کے دودھ پینے کا زمانہ تیس مہینے ہوتا ہے، ممکن ہے دو سال دودھ پینے کا زمانہ ہو اور چھ مہینے حمل کا۔
امیر المومنین عمرؓ نے یہ سن کر اپنا حکم واپس لیا اور فرمایا 

’’لولا علیؓ لہلک عمر یعنی اگر علیؓ یہاں موجود نہ ہوتے تو عمر ہلاک ہوچکا تھا‘‘

اسی طرح ایک عورت حاضر ہوئی، جس کے پیٹ میں ولد الزنا تھا۔ امیر المومنین حضرت عمرؓ نے عورت کی سنگساری کا حکم دیا۔ حضرت علیؓ پھر نہ رہ سکے، فرمایا اگر گناہ کیا ہے تو اس عورت نے کیا، مگر اس بچہ نے کیا قصور کیا ہے جو ابھی پیٹ ہی میں ہے۔

حضرت عمرؓ نے فرمایا بہت بہتر، سزا وضع حمل تک ملتوی رکھی جائے۔ اس موقعہ پر بھی حضرت عمرؓ نے فرمایا: لولا علیؓ لہلک عمر: اگر علیؓ نہ ہوتے تو عمر ہلاک ہو چکا ہوتا۔


حضرت عمر فاروق رضی اللہ عنہ کا ایک اثر انگیز واقعہ

حضرت عمر فاروق رضی اللہ عنہ کا ایک اثر انگیز واقعہ

حضرت عمر فاروق رضی اللہ عنہ کا ایک اثر انگیز واقعہ

خلیفہ ثانی حضرت عمر فاروق رضی اللہ عنہ نے چوبیس لاکھ مربع میل کر حکومت کی........راتوں کو اٹھ اٹھ کر پیرا دیتے تھے اور لوگوں کی ضرورت کا خیال رکھتے تھے.....کہتے تھے اگر فرات کے کنارے ایک کتا بھی پیاسا مر گیا تو کل قیامت کے دن عمر (رضی اللہ عنہ )سے اس بارے میں پوچھ ہو گی.......

ایک دفعہ آپ رضی اللہ عنہ دربار کا وقت ختم ہونے کے بعد گھر آئے اور کسی کام میں لگ گئے......اتنے میں ایک شخص آیا اور کہنے لگا .......امیر المومنین آپ فلاں شخص سے میرا حق دلوا دیجئے......آپ کو بہت غصہ آیا اور اس شخص کو ایک درا پیٹھ پر مارا اور کہا، جب میں دربار لگاتا ہوں تو اس وقت تم اپنے معاملات لے کر آتے نہیں اور جب میں گھر کے کام کاج میں مصروف ہوتا ہو ں تو تم اپنی ضرورتوں کو لے کر آ جاتے ہو.......
بعد میں آپ کو اپنی غلطی کا اندازہ ہوا تو بہت پریشان ہوئے اور اس شخص کو (جسے درا مارا تھا) بلوایا اور اس کے ہاتھ میں درا دیا اور اپنی پیٹھ آگے کی کہ مجھے درا مارو میں نے تم سے زیادتی کی ہے ....وقت کا بادشاہ ،چوبیس لاکھ مربع میل کا حکمران ایک عام آدمی سے کہہ رہا ہے میں نے تم سے زیادتی کی مجھے ویسی ہی سزا دو ...اس شخص نے کہا میں نے آپ کو معاف کیا ......آپ رضی اللہ عنہ نے کہا نہیں نہیں ...کل قیامت کو مجھے اس کا جواب دینا پڑے گا تم مجھے ایک درا مارو تا کہ تمہارا بدلہ پورا ہو جائے................آپ رضی اللہ عنہ روتے جاتے تھے اور فرماتے ....اے عمر تو کافر تھا .....ظالم تھا.....بکریاں چراتا تھا.......خدا نے تجھے اسلام کی دولت سے مالا مال کیا اور تجھے مسلمانوں کا خلیفہ بنایا....کیا تو اپنے رب کے احسانوں کو بھول گیا ..........آج ایک آدمی تجھ سے کہتا ہے کہ مجھے میرا حق دلاو تو تو اسے درا مارتا ہے............اے عمر کیا تو سمجھ بیٹھا ہے کہ مرے گا نہیں.....کل قیامت کے دن تجھے اللہ کو ایک ایک عمل کا حساب دینا پڑے گا...........حضرت عمر فاروق رضی اللہ عنہ اسی بات کو دھراتے رہے اور بڑی دیر روتے رہے..

اللہ ہمیں سمجھنے اور عمل کرنے کی توفیق عطا فرمائے..





Monday, October 2, 2017

مولانا رومی، پیر شمس تبریز کے مرید بن گئے: تفصیل پڑھیں

مولانا رومی، پیر شمس تبریز کے مرید بن گئے: تفصیل پڑھیں


مولانا رومی، پیر شمس تبریز کے مرید بن گئے: تفصیل پڑھیں


شاہ شمس تبریز رحمتہ اللہ علیہ مولانا جلال الدین رومی کے پیر و مرشد تھے.. یہ ان دنوں کا واقعہ ہے جب مولانا رومی شاہ شمس سے واقف کار نہ تھے..

ایک دن شاہ شمس تبریز مولانا رومی کے مکتب جا پہنچے.. کتابوں کا انبار لگا ہوا تھا اور مولانا رومی بیٹھے کچھ کتابوں کا مطالعہ کررہے تھے تو شاہ شمس نے ان سے پوچھا.. 

"ایں چیست..؟" (یہ کیا ہیں..؟) مولانا رومی نے ان کو کوئی عام ملنگ سمجھ کر جواب دیا.. " 

ایں آں علم است کہ تو نمی دانی.." ( یہ وہ علم ہے جسکو تو نہیں جانتا..)

شاہ شمس یہ جواب سن کر چپ ہو رہے..

تھوڑی دیر بعد مولانا رومی کسی کام سے اندر کسی جگہ گئے.. واپس آۓ تو اپنی وہ نادر و نایاب کتابیں غائب پائیں.. 

چونکہ شاہ شمس وہیں بیٹھے تھے تو ان سے پوچھا.. شاہ شمس نے مکتب کے اندر کے پانی کے تالاب کی طرف اشارہ کیا اور کہا.. 

"میں نے اس میں ڈال دیں.. " یہ سن کر مولانا رومی حیران و پریشان رہ گئے.. سن ہوگئے جیسے بدن میں لہو نہیں.. اتنی قیمتی کتابوں کے ضائع ہونے کا احساس انکو مارے جارہا تھا.. ( تب کتابیں کچی سیاھی سے ھاتھ سے لکھی جاتی تھیں.. پانی میں ڈلنے سے ان کی سب سیاھی دھل جاتی تھی.. ) شاہ شمس سے دکھ زدہ لہجے میں بولے.. 

"میرے اتنے قیمتی نسخے ضائع کردیے.. "

شاہ شمس انکی حالت دیکھ کر مسکراۓ اور بولے.. " اتنا کیوں گبھرا گئے ہو.. ابھی نکال دیتا ہوں.. "یہ کہہ کر شاہ شمس اٹھے اور تالاب سے ساری کتابیں نکال کر مولانا رومی کے آگے ڈھیر کردیں.. یہ دیکھ کر مولانا رومی کی حیرت کی انتہا نہ رہی کہ سب کتابیں بالکل خشک ہیں.. اور ایک ورق تک ضائع نہ ہوا ہے نہ انک پھیلی ہے۔

مولانا رومی چلا اٹھے.. "ایں چیست..؟ " (یہ کیا ہے..؟)

پیرشاہ شمس نے اطمینان سے جواب دیا.. " ایں آں علم است کہ تو نمی دانی.." ( یہ وہ علم ہے جسکو تو نہیں جانتا..)

یہ کہہ کر پیرشمس وہاں سے چل پڑے.. ادھر مولانا رومی کے اندر کی دنیا جیسے الٹ پلٹ چکی تھی.. اپنی دستار پھینک کر شاہ شمس تبریز کے پیچھے بھاگے اور جا کر ان کے پاؤں میں گرپڑے کہ خدا کے لیے مجھے معاف کردیجیے اور مجھے اپنے قدموں میں جگہ دیجیے.. "

شاہ شمس نے انہیں اٹھا کر سینے سے لگایا اور کہا.. "میں تو خود ایک عرصے سے تیری تلاش میں تھا..!! "



Maulana Rumi and Peer Shams Tabriz - by Dr Inaam Ul Haq

Maulana Rumi and Peer Shams Tabriz - by Dr Inaam Ul Haq

مولانا رومی اور  شمس تبریز:  ڈاکٹر انعام الحق کوثر
     

642ھ بمطابق 1244ءسے پیشتر کہ مولانا رومی کی مسند نشینی فقر کی تاریخ اسی سال شروع ہوتی ہے ، ان کی شہرت ، علوم معقول و منقول میں مہارت کے باعث نزدیک و دور تک پھیل چکی تھی ۔ وہ علوم دینیہ کا درس دیتے تھے ۔ وعظ کرتے تھے ، فتوے لکھتے تھے اور سماع سے سخت دوری کا مظاہرہ کرتے تھے۔ وہ زندگی کی چھتیس بہاریں گذار چکے تو ان کی زندگی کا دوسرا دور ایک مرد پراسرار شمس الدین بن علی بن ملک دادتبریزی کی ملاقات سے آغاز پایا جن کی ذات میں حد درجہ جاذبیت تھی۔ یوں تو اس سلسلے میں روایتی انداز نے دل کھول کرتا نا بانابنا ہے پھر بھی یہ حقیقت اظہر من الشمس ہو جاتی ہے کہ مولانا رومی کی شمس تبریز سے ملاقات نے کایا ہی پلٹ کر رکھ دی ۔ تمام نقاد اور مورخ یک کلمہ ہو کر تحریر کرتے ہیں کہ شمس تبریز علوم ظاہری میں ماہر ، خوش کلام، شیرین زباں اور ازیںبالاتر آنکہ جذب و سلوک کی منزلیں طے کر چکے تھے۔ وہ درویشوں کی تلاش میں شہر بہ شہر گھومتے پھرتے تھے ۔ یہی تلاش انہیں قونیہ میں بھی لے آئی ۔ مولانا نے شمس کے ہاتھ پر بیعت کی اور انہیں گھر لے گئے ۔ مختلف بیانات سے یہی نتیجہ اخذ ہوتا ہے کہ حضرت شمس دو برس کے لگ بھگ آپ کے ساتھ رہے ۔ ایک بار وہ چلے گئے تھے پھر انہیں لایا گیا ۔ دوسری دفعہ جا کر واپس نہ لوٹے ۔ ایک روایت کے مطابق قتل کر دیے گئے ۔ مولانا رومی کی شمس تبریز سے ملاقات نے ان کی زندگی ،جس میں قبل ازیں شروع سے ماورا کوئی چیز داخل نہ ہوئی تھی، ایک ایسا پرشور انقلاب پیدا کیا کہ وہ علوم معقول و منقول سے صرف نظر کرکے تصو ف سلوک اور عشق و معرفت کے عقائد اور مسائل کی جانب متوجہ ہو گئے ۔ ان کی یہ حالت ہو گئی :”زور را بگذاشت او زاری گرفت “ اور ”دل خود کام را از عشق خوں کرد“

     نتیجةً انہوں نے” نغمہ نے“ کو ایسے انوکھے اور پرکشش انداز میں سنا کہ پھر اسی کے ہوگئے ۔ ان کی رہنمائی شمس تبریز نے ایسے سرگرم انداز میں فرمائی کہ رومی نے ان کی توصیف میں نہایت دلفریب اور اچھی غزلیں لکھیں جن سے جذبے کی گہرائی اور گیرائی کا نشان ملتا ہے ۔ ان کی غزل دل کی زبان بنی ۔ آپ بیتی اور دل پر لگے ہوئے عشق کے داغ بیان ہوئے۔
     مولانا کا دیوان جسے اکثرغلطی سے ”دیوان شمس تبریز“ سمجھا جاتا ہے اس بزرگ سے مولانا کی عقیدت و ارادت کی لازوال یادگار ہے ۔ دیوان میں شمس کا نام بار بار ایسے آتا ہے کہ صاف پتہ چلتا ہے کہ شاعر کے علاوہ کوئی اور شخص مراد ہے ۔ جیسے
زبی صبری بگویم شمس تبریز
چنینی و چنانی من چہ دانم
عاشقا از شمس تبریزی چو ابر
سوختی لیکن ضیا آموختی
شمس الحق تبریزی شاہ ہمہ شیرا نست
در بیشہ جان ما شیر وطن دارد
شمس تبریزی نشستہ شاھوار و پیشِ او
شعر من صفہازد ہ چون بندگان ِاختیار
بی اثرھای شمس تبریزی
از جہان جز ملال ننماید
شمس تبریزی برای عشقِ تو
برگشادم صد در از دیوانگی
شمس تبریز کہ سرمایہ لعلست و عقیق
ما ازو لعل بدخشان و عقیق یمنیم
در فراق شمس تبریزی از آن کاھیدتن
تا فزاید جانہا راجانفزایی سیر سیر
خداوند شمس دین آن نور تبریز
کہ ہر کس را چو من چاکر نگیرد
شمس تبریر پی نور تو زان ذرہ شدیم
تاز ذرات جہان در عدد افزون باشیم
شمس تبریز شہنشاہ ہمہ مردانست
ما ازآن قطب جہان حجت و برہان داریم
شمس تبریز کم سخن بود
شاھان ہمہ صابر و امینند
مولانا رومی مثنوی معنوی میں بھی حضرت شمس کا نام بہت عزت و احترام سے لیتے ہیں ۔ مثلاً :
شمس تبریزی کہ نور مطلقست
آفتابست و ز انوار حق است
شرح این ہجران و این خون جگر
این زمان بگذار تا وقتِ دگر
     مولانا رومی شمس تبریزی کو مختلف القابات سے پکارتے ہیں جیسے نور اولیا ، نور دلہا، شاہ عشق، روی قمر، خسرو جان ، شاہ خوش آیین ،حق آگہ، سخن بخش زبان من ، شاہ شیراں ، نور تبریز، خسرو عہد ، شہ تبریز، سلطان سلطانان جان، شاہ جہانہا، وغیرہ۔
     کلیات شمس تبریزی (چاپ دوم ، 1341ش، تہران) میں 417 صفحہ پر ایک غزل (سولہ شعروں پر مشتمل) ملتی ہے جس میں حضرت شمس کو مختلف لقبوں(مثلاً دُریتیم، نقدِ عیّار، عین انسان، فخر کبار، جام جم، بحر عظیم، سرو رواں وغیرہ) سے یاد کیا ہے ۔ اس غزل کا مقطع ہے:
ای دلیل بی دلان وای رسول عاشقان
شمس تبریزی بیاز نہار دست از ما مدار
     دیوان شمسعالم شور و جذبہ کا حاصل ہے جو بیکراں سرمستی اور پایکوبی کے ساتھ شمس الدین شمس الحق تبریزی کی خدمت میں پیش کیا گیا۔ اس مجموعہ کو شعر و زیبائی کا اعجاز قراردیا جا سکتا ہے ۔ ان غزلوں میں مے عشق و زیبائی کو ایسی بدیع رنگ آمیزی، ایسی شور انگیز اور سحر انگیز عبارات اور اصطلاحات میں سمویا گیا ہے کہ گاہے واحد غزل ہی رند کو رندانہ ہا و ہو اور زاہد کو زاہدانہ انداز فکر پر اکساتی ہے ۔ رومی نے کلیةً ان غزلیات کو شعور انگیز عشق اور عجیب روحانی کیفیات کے زیر اثر صفحہ قرطاس پر منتقل کیا ہے جو تاریخ ادبیات جہان میں بے نظیر ہیں ۔ سوز دل کے متعلق فرماتے ہیں:
عشق مہمان شد بر این سوختہ
یک دلی دارم پیش قربان کنم
بادہ محبت سے مخمور ہیں :
مخمور توام ، بدست من دہ
آن جام شراب کوثری را
وارفتگی عشق:
شب وصال کی لاجواب تصویر:
باز در آمد ببزم مجلسیان دوست دوست
گرچہ غلط می دھدنیست غلط اوست اوست
عمر گل چیدن است امشب می خوردن است امشب
اضطراب عشق اور انتظار کے جذبات کی کامیاب ترجمانی:
کرانی ندارد بیابان ما
قراری ندارد دل و جان ما
دل عاشق ہر وقت حضور یار کا متمنی:
یک لحظہ ز کوی یار دوری
در مذہب عاشقان حرامست
باد عشق سے درخواست کہ اس جانب سے بھی گذر:
ای باد خوش کہ از چمن عشق می رسی
برمن گذر کہ بوی گلستانم آرزوست
     بعض اہل علم حضرات کی رائے ہے کہ دیوان شمس تبریز ی کا جتنا بھی مطالعہ کیا جائے اتنا ہی وہ زیادہ تازگی بخشتا ہے اور لگا تار فیض پہنچانے والا بنتا ہے ۔ انسان کی ملال پذیر طبیعت سے کوفت کو دور کرتا ہے اور انسان اس نتیجے پر پہنچتا ہے کہ اس قدر انسانی فطرت کی تعبیر شاید ہی کسی اور شاعر میں ہو جس قدر مولانا رومی کے کلام میں پوشیدہ ہے ۔ جوش عزم ملاحظہ ہو:
مابه فلک میرویم عزم تماشا کراست
ایک اور شعر دیکھیے:
بشاخ زندگی ما نمی زتشنہ لبی است
تلاش چشمہ حیوان دلیل کم طلبی است
علامہ اقبال کے ہاں بھی تخیل میں یہی زور اور بیان میں یہی جوش ہے۔ خود کہتے ہیں:
                                                                مطرب، غزلی، بیتی از مرشد روم آور
                                                                تاغوطہ زند جانم در آتش تبریزی
     مولانا رومی کے کلام سے ایسا محسوس ہوتا ہے کہ کوئی عاشق اپنے معشوق کی تعریف کر رہا ہے لیکن اس میں جنسی کشش معدوم ہے۔ یہ جو دعوی کیا جاتا ہے کہ ساری محبت جنسی کشش پر مبنی ہے یہاں اس کے برعکس جنس اور بدن قطعی طو ر پر ختم ہو جاتا ہے ۔ عشق اصلاً اور طبعاً ذہنی اور روحانی اتصال کانام بن جاتا ہے ۔ اس مقام کا ترفع اس حد تک ہے کہ جنس بالکل خارج از بحث ہو جائے اور کشش محض روحانی رہ جائے ۔ اس مقام پر مولانا کی کئی غزلیں ہیں۔ کہتے ہیں:
دوئی را چون برون کردم دو عالم را یکی دیدم
یکی بینم ، یکی جویم ، یکی دانم،یکی خوانم
الا ای شمس تبریزی چنان مستم درین عالم
کہ جز مستی و سرمستی دگر چیزی نمیدانم
٭٭٭
رسید مژدہ بشامست شمس تبریزی
چہ صبحہا کہ نماید اگر بشام بود
٭٭٭
جز شمس تبریزی مگو جز نصر و پیروزی مگو
جز عشق و دلسوزی مگو جز این مدان اقرار من
     جس طرح نظام شمسی جذب باہمی پر قائم و دائم ہے اسی طرح انسان بھی جذب معانی سے زندہ ہیں۔ اس جذب باہمی کی اعلیٰ ترین صورت وہ رابطہ ہے جو بندے اور خدا کے درمیان ہے ۔ خدا کی طرف سے یہ جذب ربوبیت کی شکل میں اور بندے کی جانب سے محبت کے روپ میں رونما ہوتا ہے ۔ گویا خدا کے ساتھ بندے کا رابطہ محبت کا ہے اورخدا کا بندے سے عبودیت کا ہے اور یہی اصلی تصوف ہے۔ اللہ ہر کسی کو رزق دیتا ہے اس کا بندہ ، سمجھ میں آئے یا نہ آئے اس کے احکام کی پابندی کرتا ہے ۔ پھر جب مولانا رومی کی طرح شمس تبریز کے توسط سے شخصیت کی تکمیل ہوتی ہے تو یہ صورت بن جاتی ہے :
بخدا خبر ندارم چون نماز می گزارم
کہ تمام شد رکوعی کہ امام شد فلانی
     مولانا رومی کی شمس تبریز سے ذہنی اور روحانی ہم آہنگی کا نتیجہ ہے کہ شریعت اور طریقت کی خلیج کو پاٹ دیا گیا ۔ شریعت اور طریقت کے ملاپ سے جو تصوف پیدا ہوا وہ ارفع ہے ۔ اس کا ذکر مولانا کے اشعار میں ملتا ہے۔ فرماتے ہیں :
یک دست جامِ بادہ و یک دست جعدِ یار
رقصی چنین میانہ میدانم آروزست
گفتم کہ یافت می نشود جستہ ایم ما
گفت آنکہ یافت می نشود آنم آرزو ست
٭٭٭
باش اول برشریعت استوار
بعدازاں سوی طریقت رو بیار
     جذبہ اورعقل میں جو تضاد ہے ان میں آخر کار جذبہ کو فوقیت حاصل ہوتی ہے ۔ حواس باطنی سے جو جذبہ طے ہو وہ کبھی بھی اپنی اثر آفرینی کھو نہیں سکتا ۔ ایک بار جب وجود باطنی مکشوف ہو جاتا ہے اور آدمی کشف کی نعمت سے بہرہ یاب ہو جاتا ہے تو وہ جذبہ وہ تجربہ جو کشف کے ذریعہ پیدا ہوا ہے کبھی محو نہیں ہو سکتا ۔ حقیقت مکشوف ابدی ہے اور حقیقت عقلی عارضی ۔مولانا رومی فرماتے ہیں :
بگذر از باغ جہان یک سحر ای رشک بہار
تاز گلزار و چمن رسم خزان برخیزد
٭٭٭
بار دیگر از دل و عقل و جان برخاستیم
یار آمد درمیان ما از میان برخاستیم
     مولانا رومی شمس تبریز کی صحبت کے باعث ہی سامع کے شیدا و والہ بنے اور ان کے بقول :
سماع از بہر و صلِ دلستانست
اور یہ کہ
سماع از بہر جان بی قرارست
     موسیقی کے اثرات ان کے کلام میں بھی ظاہر ہو ئے ہیں ۔ اس بنیادی خصوصیت کے بارے میں پروفیسر نکلسن نے بھی اشارہ کیا ہے ۔ علی دشتی نے اس کی یوں توضیح کی ہے ”جلال الدین با کلمات محدود و نارسای زبان ، نسبت بفکر و جوش درونی ہمان کاری را انجام میدھد کہ موسیقی با ترکیب اصوات و آزاد از محدودیت ۔“ دیوان شمس کی اکثر غزلیں اُن لگاتار موجوں کی صداوں کی مانند ہیں جو ہوا کے باعث ساحل سے ٹکراتی رہتی ہیں آواز آتی ہے :
ای یار من ای یار من ای یار بی زنہار من
ای ھجر تو دلسوز من ای لطف تو غمخوار من
خود میروی در جان من، چون میکنی درمان من
ای دین من، ای جان من، ای بحر گوھر بار من
ای جان من ای جان من سلطان من سلطان من
دریای بی پایان من بالاتر از پندار من
     وہ حقیقت کو اس انداز میں پیش کرنے کے عادی ہیں کہ قارئین اس کا احساس کرنے کے باوجود اسے بیان نہیں کر سکتے ۔ ان کا کلام ہمیشہ طرب آور، ہموم انگیز اور تخیل پرور ہوتا ہے لیکن وہ احساس قارئین کی فکر کو ایسی جلا بخشتا ہے کہ وہ اسی کے ہو کر رہ جاتے ہیں ۔ بسا اوقات ایسا محسوس ہوتا ہے کہ رومی شعر کہنا اور اپنے خاموش احساسات کو پیش کرنا نہیں چاہتے ۔وہ صرف اپنے دیکھے ہوئے خواب کو بیان کرنے کے خواہاں نظر آتے ہیں۔ چنانچہ وہ ہاتھ پاوں مارتے ہیں ۔ ان کا یہ عمل موزوںاور خوش آہنگ کلمات کی صورت میں ظاہر ہوتاہے اور ان کاشعر قارئین کو صبح کے پھولوں کی طراوت اور بادہ کہنہ کا نشہ بخشتا ہے ۔ وہ خود کہتے ہیں :
ھمہ جوشم ھمہ موجم سر دریای تودارم
     وہ شعر کو ہنر مندی کاذریعہ نہیں بناتے۔ وہ تو ان کے لیے آئینہ روح ہے ۔ وہ زندگی سے ناامید نہیں ہوتے ۔ امید ہمیشہ ان کے عشق میں موجزن رہتی ہے ۔ان کا دیوان سبزہ زار عشق اور لالہ محبت ہے۔ وہ نور مطلق کے نزدیک ہو جاتے ہیں اور اپنے آپ کو سراسر عشق ، سراسر عقل اور سراسر جان خیال کرتے ہیں :
نہ ابرم من نہ برقم من نہ ماھم من نہ چرخم من
ھمہ عشقم ھمہ عقلم ھمہ جانم بہ جانانہ
شعر گوئی سے ان کا مقصد یہی ہے کہ حقائق شعر کا لبادہ اوڑھ لیں۔ چنانچہ فرماتے ہیں:
خواہم کہ کفکِ خونین از دیگ جان بر آرم
گفتار دو جہان را از یک دھان بر آرم
     یہ صفت عروج و کمال کے ساتھ مثنوی میں ملتی ہے لیکن دیوان میں بھی یہی نمایاں ہے مثلاً سرّاَنا کے متعلق کہتے ہیں:
از کنار خویش یابم ہر دمی من بوی یار
عشق اور بندگی کے بارے میں:
دیگران آزاد سازند بندہ را
عشق بندہ میکند آزاد را
     دیوان شمس تبریزی تکلف اور تصنع سے اس حد تک دور ہے کہ شعر میں صنایع ظریف و مطلوب کی جانب توجہ ضروری نہیں سمجھی جاتی کیونکہ اشعار کہنے والا کسی اور چیز میں محو ہے ۔ وہ فقط اپنے خیال اور احساس کو پیش کرتا ہے ۔ گاہے بغیر کسی اختیار اور ارادے کے یہ عمل مکمل ہوتا ہے :
مارا سفری فتاد بی ما
آنجا دل ما گشاد بی ما
مائیم ہمیشہ مست بی می
مائیم ہمیشہ شاد بی ما
     مولانا کے اشعار کا مطلب سمجھنے میں دقت اس لیے نہیں ہوتی کہ وہ مانوس اور عام فہم الفاظ بروئے کار لاتے ہیں ۔ اس پر مستزادیہ کہ خیالات میں صفائی اور سادگی ہونے کے سبب تصورات میں الجھاو نہیں۔ فرماتے ہیں :


بر چرخ ، سحر گاہ یکی ماہ عیان شد
از چرخ فرود آمد و در ما نگران شد
درجان چو سفر کردم جز ماہ ندیدم
تا سرّ تجلی ازل، جملہ بیان شد
٭٭٭
عشقست بر آسمان پریدن
صد پردہ بہر نفس دریدن
ہر کہ بہر تو انتظار کند
بخت و اقبال را شکار کند
٭٭٭
     رومی کے کلام میں سعدی کی فصاحت ، عنصری کی پختہ کاری ، انوری اور فرخی کے پرشکوہ الفاظ موجود نہیں ۔ ان کے یہاں مسعود سعد سلمان کی مستحکم زبان اور خاقانی جیسی استادانہ ترکیبات نہیں ملتیں ۔ ان کے کلام میں ایک ایسی چیز ہے کہ ان سب کے راستے کو روکتی ہے اور ان سے برتر ہے ۔ انہوں نے جو کچھ محسوس کیا ہے اسے مجاز کی راہ اپنائے بغیر بیان کیا ہے ۔ وہ بغیر کسی فلسفیانہ رنگ کے اپنی روح کی شورید گی اور دیوانگی کو صفحہ قرطاس پر رقم کرتے ہیں۔ اس کیفیت میں وہ تند و تیز ہوا کے جھونکے کی مانند ہیں کہ جو کچھ اس کے راستے میں آئے اسے لپیٹ کر لے جائے۔
     مولانا کے شعر کا انداز جدا ہے ۔ انہوں نے راہ نوتراشی ہے ۔ جس کی شاخیں ویرانوں ، کاشانوں ، میخانوں اور بتخانوں کی جانب جاتی ہیں۔ لیکن پھر مڑ آتی ہیں اور سیدھی عاشقوں کی عبادتگاہ کا رخ کرتی ہیں اور یوں حق و حقیقت کی راہ سے ملاپ پاتی ہیں ۔ مولانا کی پرواز زمین سے آسمان کی طرف ہوتی ہے ۔ پھر جب لوٹتے ہیں تو روحانی غذا مہیا کر تے ہیں جو جسم و روح میںداخل ہوتی ہے ۔ جسم وروح فیض پاتے ہیں ، ذی حیات اور ذی عقل بہرہ ور ہوتے ہیں ۔مسرت و شادمانی اور خرمی و انبساط کا سیلاب امڈ آتا ہے اور صائب تبریزی کے الفاظ میں یہ کیفیت ہوجاتی ہے :
از گفتہ مولانا مدھوش شدم صائب
این ساغر روحانی صہبای دگر دارد
اور علامہ اقبال کی آواز آتی ہے:
پیر رومی خاک را اکسیر کرد
از غبارم جلوہ ہا تعمیر کرد
     مولانا رومی کے یہاں آتش عشق موجود تھی۔ آتش کو بھڑکانے کا بھی بندوبست تھا ۔ صرف باد نسیم کے ایک جھونکے کی منتظر تھی ۔ یہ کام حضرت شمس تبریزی نے سرانجام دیا ۔ ان کے تاثرات و انفعالات میں ہیجان پیدا ہو گیا ۔ وہ اسی انقلاب دروں کی تصویر کشی کرتے چلے گئے ۔ حضرت شمس کے بعد صلاح الدین زرکوب اور حسام الدین چلپی نے اُن کی جگہ لے لی۔ یوں دیوان اور مثنوی منظر عام پر آئے۔ ہزاروں اشعار کہنے کے باوجود ان کی آتش عشق بجھنے نہ پائی اور وہ ہر دور کے سب سے بڑے صوفی شاعر متصور ہوئے ۔ خود فرما گئے:

گفتا کہ چندرانی گفتم کہ تابخوانی
گفتا کہ چند جوشی گفتم کہ تاقیامت
٭٭٭
ھم خونم و ھم شیرم ھم طفلم و ھم پیرم
ھم چاکر و ھم میرم ھم اینم و ھم آنم
ھم شمس شکرریزم ھم خطہ تبریزم
ھم ساقی و ھم مستم ھم شہرہ و پنہانم
شمس الحق تبریزم جز با تو نیامیزم
می افتم و می خیزم من خانہ نمی دانم
٭٭٭
فسانہ عاشقان خواندم شب و روز
کنون در عشق تو افسانہ گشتم
     حضرات !یہ ان کا فسانہ ہی تو ہے جو ہمیں نزد و دور سے یہاں لے آیا ہے اور ہم دنیا بھر میں سر دھنتے تھکتے نہیں۔

منابع

ادب نامہ ایران، مقبول بیگ بدخشانی، لاہور، 1958
تاریخ ادبیات ایران، رضازادہ شفق، تہران، 1313ش
سوانح مولانا روم ، شبلی نعمانی، لاہور، 1950
تذکرة الشعرا، دولت شاہ سمرقندی (ترتیب دہندہ اقبال صافی) ،لاہور، 1924
کلیات دیوان شمس تبریزی، با دو مقدمہ از علی دشتی واستاد بدیع الزمان فروزانفر، تہران 1341ش
گنجینہ ادب، عابد علی عابد، لاہور۔
گنج ادب، مقبول بیگ بدخشانی ، ظہور الدین احمد ، ڈاکٹر محمد باقر،لاہور، 1962
مفتاح العلوم (پہلی جلد) محمد نذیر عرشی ،لاہور، 1962
قندیل ، لاہور، 21 دسمبر 1952ء؛ مجلہ عثمانیہ ،حیدر آباد دکن ، جلد ہفتم ، شمارہ دوم ،ہلال کراچی ، دسمبر 1975، دسمبر 1958، مارچ 1962ءجون 1963۔ پروفیسر سید عابد علی عابد کے لیکچر ، 17 نومبر ، 21 نومبر 1953، ۲، ۶، ۹ مارچ 1954، دیال سنگھ کالج، لاہور۔



Follow us on social media to get instent updates....

|Twitter| |Facebook| |Pinterst| |Myvoicetv.com|
Example

Send your news/prs to us at myvoicetv.outlook.com..

Note: The views, comments and opinions expressed on this news story/article do not necessarily reflect the official policy or position of the management of the website. Companies, Political Parties, NGOs can send their PRs to us at myvoicetv@outlook.com

 
‎لطیفے اور شاعری‎
Facebook group · 8,142 members
Join Group
یہ گروپ آپ سب کے لئے ہے۔ پوسٹ کیجئے اور بحث کیجئے۔۔۔۔۔ اپنی آواز دوسروں تک پہنچائے۔۔۔اور ہاں گروپ کو بڑا کرنے کے لئے اپنے دوستوں کو بھی گروپ میں دعو...
 

All Categories

Aaj Kamran Khan ke Saath Aamir Liaquat Hussain Aapas ki Bat NajamSethi Abdul Qadir Hassan AchiBaatain Afghanistan Aga Khan University Hospital AirLineJobs Allama Iqbal America Amjad Islam Amjad Anjum Niaz Ansar Abbasi APP Aqwal Zareen Articles Ayat-e-Qurani Ayaz Amir Balochistan Balochistan Jobs Bank of Khyber Banking Best Quotes Biwi Jokes Blogger Tips Chaltay Chaltay by Shaheen Sehbai China Chitral Coca-Cola Coke Studio Columns CookingVideos Corporate News Corruption Crimes Dr Danish ARY Sawal Yeh Hai Dubai E-Books EBM Education Educational Jobs Emirates English #Quotes English Columns EnglishJokes Funny Photos Funny Talk Shows Funny Videos Gilgit-Baltistan Girls Videos Govt Jobs HabibJalibPoetry Hamid Mir Haroon Al-Rashid Hasb-e-Haal with Sohail Ahmed Hassan Nisar Hassan Nisar Meray Mutabaq Hazrat Ali AS Sayings HBL Health HikayatShaikhSaadi Hospital_Jobs Huawei Hum Sab Umeed Say Hain India Information Technology Insurance International News Islam Islamabad Islamic Videos JammuKashmir Javed Chaudhry Jazz Jirga with Salim Safi Jobs Jobs Available Jobs in Karachi Jobs in KPK Jobs in Pak Army Jobs_Sindh JobsInIslamabad Jokes Jubilee Insurance Kal Tak with Javed Chaudhry Karachi Kashmir KhabarNaak On Geo News Khanum Memorial Cancer Hospital Khara Sach With Mubashir Lucman Khyber Pakhtunkhwa Lahore Latest MobilePhones Lenovo LG Life Changing Stories LifeStyle Live With Dr. Shahid Masood Live with Talat Hussain Maulana Tariq Jameel MCB Bank Microsoft Mobilink Mujeed ur Rahman Shami Munir Ahmed Baloch Nasir Kazmi Nazir Naji News News Videos NGO Nokia North Korea Nusrat Javed Off The Record (Kashif Abbasi) Off The Record With Kashif Abbasi On The Front Kamran Shahid OPPO Orya Maqbool Jan Pakistan Pakistan Army Pakistan Super League Pashto Song Photos Poetry Political Videos Press Release Prime Time with Rana Mubashir PTCL Punjab Quetta Quotes Rauf Klasra Samsung Sar-e-Aam By Iqrar-ul-Hasan Sardar Jokes Saudi Arabia ShiroShairi Show Biz Sikander Hameed Lodhi Sindh Social Media Sohail Warriach Songs Sports News Stories Syria Takrar Express News Talat Hussain Talk Shows Technology Telecommunication Telenor To the point with Shahzeb Khanzada Tonight with Moeed Pirzada Turkey Tweets of the day Ufone University Jobs Urdu Ghazals Urdu News Urdu Poetry UrduLateefay Video Songs Videos ViVO Wardat SamaaTV WaridTel Wasi Shah Zong اردو خبریں
______________ ☺ _____________ _______________ ♥ ____________________
loading...